https://www.facebook.com/khilafah.net

nusr-khilafah-ur-8-70-575

معاشرتی نظام ( 112-122 )

ادفعہ نمبر 122: ولاد کی پرورش

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 122: چھو ٹے بچوں کی کفالت عورت پر واجب اور اس کا حق ہے خواہ وہ مسلمان ہو یا غیر مسلم بشرطیکہ چھو ٹا بچہ اس کفالت کا محتاج ہو۔جس وقت اس کو اس کی ضرورت نہ رہے تو دیکھاجائے گا،اگر پرورش کرنے والا اور ولی دونوں مسلمان ہوں ،مرد ہو یا عورت تو چھوٹے لڑکا یا لڑکی کو اختیار دیا جائے گا کہ وہ جس کے ساتھ رہنا چاہتا ہے رہے۔ اگر ان دونوں میں سے ایک مسلمان ہو تو کوئی اختیار نہیں دیا جائے گابلکہ ان میں سے مسلمان کے حوالے کیا جائے گا۔

 

Article 122: Custody of the child is a right and duty upon the mother, irrespective of whether she is a Muslim or not as long as the child needs this care. If the child no longer needs the care, then the situation is examined. If both of the parents are Muslim then the child, whether boy or girl, chooses whomever they would like to live with, and they will join whomever they choose, irrespective of whether that was the man or woman. If one of them is non-Muslim, then there is no choice between them; and they rather will join the Muslim parent.

The evidence for this article is what was narrated by Abdullah Bin Amr b. Al-‘As:

«أَنَّ امْرَأَةً قَالَتْ: يَا رَسُولَ اللهِ، إِنَّ ابْنِي هَذَا كَانَ بَطْنِي لَهُ وِعَاءً، وَثَدْيِي لَهُ سِقَاءً، وَحِجْرِي لَهُ حِوَاءً، وَإِنَّ أَبَاهُ طَلَّقَنِي وَأَرَادَ أَنْ يَـنْـتَزِعَهُ مِنِّي، فَقَالَ لَهَا رَسُولُ اللَّهِ SL-16pt : أَنْتِ أَحَقُّ بِهِ مَا لَمْ تَـنْكِحِي»

“A woman said “O Messenger of Allah, this is my son whom my stomach carried, my breast is a water-skin for him, and my lap is a guard for him. His father has divorced me and wants to take him away from me”. So he SL-16pt said “You have more right to him as long as you do not remarry”” (reported by Abu Dawud and Al-Hakim who authenticated it, and Al-Dhahabi confirmed it). This indicates that the mother has more right to the child while they still require nursing, since the Messenger SL-16pt ruled for her to continue nursing him as long as she was not married, and did not give the child the choice, which indicates that he still required nursing. It is narrated by Ibn Abi Shaybah from Umar (ra) with an authentic chain whose reporters are all trustworthy that he divorced Umm ‘Asim, then came to her while ‘Asim was in her lap, and wanted to take him from her. The two of them argued until the young boy began crying, and so they went to Abu Bakr as-Siddiq (ra) who said “Her touch, lap and smell are better for him than you, until he grows up and then can choose for himself”. Accordingly the young child who still needs nursing remains the mother’s right and it is obligatory upon her and similarly upon her mother and grandmother, and upon every women from those who have the right of custody.

When the child becomes older, such that they are above the age of nursing which is by confirming whether he can do without it or not – which differs between children depending upon their circumstances – so a boy may not require it and he was five years old, and another when they were younger or older, and should be according to an expert’s opinion. Based upon that, if they were not reliant upon nursing they are given the choice between the parents; Abu Hurayrah reported

«أَنَّ النَّبِيَّ SL-16pt خَـيَّرَ غُلامًا بَـيْنَ أَبِيهِ وَأُمِّهِ»

“The Prophet gave a boy the choice between his mother and father” (reported by Ahmad and Al-Tirmidhi who authenticated it). And Abu Dawud reported a narration from Abu Hurayrah that Ibn Hibban authenticated:

«... أَنِّي سَمِعْتُ امْرَأَةً جَاءَتْ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ SL-16pt وَأَنَا قَاعِدٌ عِنْدَهُ فَقَالَتْ: يَا رَسُولَ اللَّهِ، إِنَّ زَوْجِي يُرِيدُ أَنْ يَذْهَبَ بِابْنِي وَقَدْ سَقَانِي مِنْ بِئْرِ أَبِي عِنَبَةَ وَقَدْ نَـفَعَنِي، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ SL-16pt : ... هَذَا أَبُوكَ وَهَذِهِ أُمُّكَ فَخُذْ بِيَدِ أَيـِّهِمَا شِئْتَ، فَأَخَذَ بِيَدِ أُمِّهِ فَانْطَلَقَتْ بِهِ»

“While I was sitting with the Prophet a woman came and said: O Messenger of Allah, my husband wants to take my son, and he brings me water from the well of Abu ‘Inaba, and helps me, and so the Prophet said…This is your father and this is your mother, so take the hand of whichever of the two you wish. So he took the hand of his mother and so she left with him.”

These evidences indicate that once the child, whether boy or girl, reaches the age that they no longer require suckling and nursing, they are given the choice between their mother and father, irrespective of whether they were three years old or more as long as they no longer required nursing. If they still required nursing then the ruling is given in favour of the mother and the child is not given any choice.

However, if the women, such as the mother, was a disbeliever and requested to nurse her child, then if they were lower than the age of suckling or requiring nursing then the child is ruled in her favour in the same way as the Muslim woman, with no difference between them due to the generality of the narration

«أَنْتِ أَحَقُّ بِهِ مَا لَمْ تَـنْكِحِي»

“You have more right to him as long as you do not remarry”. As for when the child is above the age of nursing, such that they are at the age or above the age they no longer need to be suckled, and no longer require nursing, then the child is not given the choice but rather is given to the Muslim parent. If the wife was the Muslim then the child would be given to her and if the husband was the Muslim then the child would be given to him, due to His (swt) words

((وَلَنْ يَجْعَلَ اللَّهُ لِلْكَافِرِينَ عَلَى الْمُؤْمِنِينَ سَبِيلًا}

And never will Allah give the disbelievers over the believers a way [to overcome them].(TMQ 4:141), and custody gives the custodian a way over the Muslim. Also due to his SL-16pt words

«الإِسْلاَمُ يَعْلُو وَلاَ يُعْلَى»

“Islam is above and nothing is made above it”, reported by Al-Daraqutni from ‘Aith Al-Mazni with a Hasan chain, and the custodian is above the child. Keeping the child under the custody of the disbeliever who will teach them disbelief is not allowed, and for that reason the child is taken from them.

As for what was narrated by Abu Dawud from ‘Abd alHamid b. Ja‘far from his father from his grandfather Rafi‘ b. Sinan that

«أَنَّهُ أَسْلَمَ، وَأَبَتِ امْرَأَتُهُ أَنْ تُسْلِمَ، فَأَتَتِ النَّبِيَّ SL-16pt فَقَالَتِ: ابْـنَتِي، وَهِيَ فَطِيمٌ أَوْ شَبَهُهُ، وَقَالَ رَافِعٌ: ابْـنَتِي، قَالَ لَهُ النَّبِيُّ SL-16pt : اقْعُدْ نَاحِيَةً، وَقَالَ لَهَا: اقْعُدِي نَاحِيَةً، قَالَ: وَأَقْعَدَ الصَّبِيَّةَ بَـيْـنَهُمَا، ثُمَّ قَالَ: ادْعُوَاهَا، فَمَالَتِ الصَّبِيَّةُ إِلَى أُمِّهَا، فَقَالَ النَّبِيُّ SL-16pt : اللَّهُمَّ اهْدِهَا، فَمَالَتِ الصَّبِيَّةُ إِلَى أَبِيهَا فَأَخَذَهَا»

he embraced Islam, and his wife refused to do likewise and so she went to the Prophet SL-16pt and said “She is my daughter. She has finished breastfeeding   or is about to”. Rafi’ said “She is my daughter”. The Prophet SL-16pt said to him sit on one side, and told his wife to sit on the other. He SL-16pt then said “Call her”, and the girl inclined to her mother. The Prophet SL-16pt then said “O Allah, guide her”, and then she inclined to her father, and so he took her”. This narration is authenticated by Al-Hakim and Al-Dhahabi agreed with him, and Al-Daraqutni mentioned that the girl’s name was Umayra. Ahmed and Al-Nasa’i both narrated this narration with a different chain, Al-Nasa’i narrated from ‘Abd Al-Hamid b. Ja’far Al-Ansari from his grandfather

«أَنَّهُ أَسْلَمَ، وَأَبَتِ امْرَأَتُهُ أَنْ تُسْلِمَ، فَجَاءَ ابْنٌ لَهُمَا صَغِيرٌ لَمْ يَبْلُغِ الْحُلُمَ، فَأَجْلَسَ النَّبِيُّ SL-16pt الأَبَ هَا هُنَا وَالأُمَّ هَا هُنَا، ثُمَّ خَـيَّرَهُ فَقَالَ: اللَّهُمَّ اهْدِهِ، فَذَهَبَ إِلَى أَبِيهِ»

“that his grandfather embraced Islam, while his wife refused. Thier young son who has not reached puberty yet came. The Prophet SL-16pt sat the father in one place and the mother at another, and then gave the young boy the choice and said “O Allah guide him”, and so he went to his father”. Ibn Jawzi mentions that between the two chains of narrations the chain that mentions that it was a boy is the more correct.

The Messenger SL-16pt was not content with what the child had chosen, rather he prayed for him and so he chose his Muslim father, or in other words, the child was given to the Muslim of the two parents.

مقبول مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر133:…

دفعہ نمبر133: عشری زمین وہ ہے جہاں کے رہنے والے اس زمین پر رہتے ہوئے (بغیر کسی جنگ سے یا صلح کے ) ایمان لے آئے ،اسی طرح جزیرۃ العرب کی زمین ۔ جبکہ خراجی زمین وہ زمین ہے جو جنگ یا صلح کے ذریعے فتح کی گئی ہو ،سوائے جزیرۃ العرب کے۔ عشری زمین اور اس کے پیداوار کے مالک افراد ہوتے ہیں، جبکہ خراجی زمین ریاست کی ملکیت ہوتی ہے اور اس کی پیداوار افراد کی ملکیت ہوتی ہے، ہر فرد کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ شرعی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 1:…

دفعہ نمبر 1: اسلامی عقیدہ ہی ریا ست کی بنیا د ہے یعنی ریا ست کے وجود ، اس کی سا خت (ڈھانچہ)، اس کے محا سبے اور اس سے متعلق کسی بھی چیز کی بنیا د اسلامی عقیدہ ہی ہو گا۔ ساتھ ہی یہ عقیدہ دستور اور قوانین کے لیے ایسی اسا س ہو گا کہ ان دو نوں سے متعلق کسی بھی چیز کی اُس وقت تک اجازت نہیں ہو گی جب تک وہ اسلامی عقیدہ سے اخذ شدہ نہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 14:…

دفعہ نمبر 14: افعا ل میں اصل حکم ِ شرعی کی پا بند ی ہے ، اس لیے حکم شرعی معلو م کر کے ہی کو ئی کام کیا جائے گا ، جبکہ اشیا ء میں اصل ابا حہ (مبا ح ہو نا ) ہے جب تک کسی شے کے حرا م ہونے کی دلیل وار دنہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 5:…

دفعہ نمبر 5: وہ تمام افراد جو اسلامی ریاست کے شہری ہیں ان کو تمام شرعی حقوق حاصل ہوں گے۔ دفعہ نمبر 6: ریاست کے لئے یہ جائز نہیں کہ وہ اپنے شہریوں کے مابین حکومتی معاملات عدالتی فیصلوں ، لوگوں کے معاملات کی دیکھ بھال اور دیگر امور میں امتیازی سلوک کرے،بلکہ اس پر فرض ہے کہ وہ تمام افراد کو رنگ نسل اور دین سے قطع نظر ایک ہی نظر سے دیکھے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 7:…

دفعہ نمبر 7: ریاست ان تمام افراد پر جو اسلامی ریاست کے شہری ہوں مسلم ہوں یا غیر مسلم حسب ذیل طریقے سے اسلامی شریعت نافذکرے گی : (ا) مسلمانوں پر بغیر کسی استثناء کے تما م اسلامی احکامات نافذکرے گی۔ (ب) غیر مسلموں کو ایک عام نظام کے تحت ان کے عقیدے اور عبادت کی آزادی دی جائے گی۔ (ج) مرتدین اگر خود مرتد ہوئے ہیں ان پر مرتد کے احکامات نافذ کیے جائیں گے ،اگر وہ مرتد کی اولاد ہوں اور پیدائشی غیرمسلم…

دستور کے کچھ مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 154:…

دفعہ نمبر 154: حقوق اور فرائض کے لحاظ سے افراد اور کمپنیوں کے ملازمین ریاستی ملازمین کی طرح ہیں۔ ہر وہ شخص ملازم ہے جو اجرت پر کام کرتا ہے خواہ کام یا کام کرنے والا کوئی بھی ہو۔ جب آجر (ملازم) اور مستاجر (کام کروانے والا) کے درمیان اجرت پر اختلاف ہو جائے تو اجرت مثل کے مطابق فیصلہ کیا جائیگا۔ اجر ت کے علاوہ اگر کسی چیز میں اختلاف ہو جائے تواس کا فیصلہ احکام شرعیہ کے مطابق ملازمت کے معاہدے کو…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 160:…

دفعہ نمبر 160: ریاست صنعت کے شعبے کی تمام معاملات کی نگرانی کرے گی اور عوامی ملکیت سے تعلق رکھنے والی صنعتوں کی براہ راست نگرانی اور دیکھ بھال کرے گی۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 117

دفعہ نمبر 117: عورت کی ایک خاص زندگی ہے اور ایک عام۔عام زندگی میں وہ خواتین،محرم مردوں اور غیر محرم مردوں کے ساتھ اس طرح رہ سکتی ہے کہ اس کے ہاتھوں اور چہرے کے علاوہ کچھ نظر نہیں آنا چاہیے۔بے پردہ اور زینت کا ظہار بھی نہ ہو۔خاص زندگی میں صرف خواتین اور محرم مردوں کے ساتھ رہنا ہی اس کے لیے جائز ہے۔غیر محرم مردوں کے ساتھ رہنا اس کے لیے بالکل جائز نہیں۔دونوں حالتوں میں احکام شرعیہ کی پابندی لازمی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 48:…

دفعہ نمبر 48: معاون تفویض کو کسی خاص انتظامی ادارے یا محکمے کے ساتھ خاص نہیں کیا جائے گا بلکہ اس کی نگرانی عام ہوگی۔ کیونکہ جو لوگ براہ راست انتظامی امور چلاتے ہیں وہ ملازم ہوتے ہیں حکمران نہیںجبکہ معاون تفویض حکمران ہے۔ اسی طرح اس کو کوئی خصوص کام یا ذمہ داری نہیں دی جائے گی کیونکہ اس کا منصب نیابت عمومی کا ہے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 83:…

دفعہ نمبر 83: اپیل کورٹس اور خصوصی عدالت کا کوئی وجود نہیں،کیس کے فیصلے کا ایک ہی قطعی درجہ ہے،قاضی جس وقت فیصلہ سنادے تو اس کا فیصلہ اسی وقت نافذ ہو تا ہے،کسی اور قاضی کا فیصلہ کسی بھی حالت میں اس کے فیصلے کو کالعدم نہیں کر سکتا سوائے اس صورت کے کہ اس نے غیر اسلامی فیصلہ دیا ہو،یا اس نے کتاب،سنت یا اجماع صحابہ کی کسی قطعی نص کی خلاف ورزی کی ہو ،یا یہ معلوم ہو جائے کہ اس نے حقائق کے بر خلاف فیصلہ…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 56:…

دفعہ نمبر 56: ہر ولایہ میں اہل ولایہ کی ایک منتخب اسمبلی ہوگی جس کے سربراہ خود والی ہوں گے اور اس اسمبلی کے پاس صرف انتظامی امور کے حوالے سے رائے دینے کا اختیار ہوگا حکمرانی کے معاملات میںاس کا کوئی دخل نہیں ہوگا۔ یہ اختیار بھی دو مقاصد کے لیے ہوگا۔ پہلامقصد: ولایہ کی زمینی حقائق اور ضروریات کے بارے میں والی کو ضروری معلومات مہیا کرنا اور اس کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کرنا۔ دوسرا مقصد: والی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 35:

دفعہ نمبر 35: امت ہی خلیفہ کا تقرر کرتی ہے ۔لیکن جس وقت شرعی طریقے سے خلیفہ کو بیعت انعقاد دے دی جائے اس کے بعد امت کو اُس خلیفہ کو معزول کرنے کا اختیار نہیں۔