https://www.facebook.com/khilafah.net

nusr-khilafah-ur-8-70-575

خلافت ریاست کے دستور، خلیفہ (24-41)

دفعہ نمبر 24: خلیفہ ، امت کے سلطان، شریعت کے نفاذ.

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 24: خلیفہ ہی اختیار اور شریعت کے نفاذ میں امت کا نمائندہ ہوتا ہے ۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 24: خلیفہ ، امت کے سلطان، شریعت کے نفاذ.

دفعہ نمبر 25: خلافت: کی پسند اور رضا مندی کی ایک معاہدہ ہے

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 25: خلیفہ رضا مندی اور اختیار کا عقد ہے، اس لیے کسی کو اس کے قبول کرنے پر مجبور نہیںکیا جاسکتا نہ ہی کسی کو اس بات پر مجبور کیا جاسکتا ہے کہ فلاح شخص کو ہی تم نے خلیفہ منتخب کرنا ہے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 25: خلافت: کی پسند اور رضا مندی کی ایک معاہدہ ہے

دفعہ نمبر 26: خلیفہ منتخب کرنے کا حق

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 26: ہر مسلمان با لغ عا قل مرد ہویا عورت کو ریا ست کا سربراہ منتخب کرنے اوراس کی بیعت کرنے کا حق حا صل ہے، غیر مسلم ذمی کو یہ حق حا صل نہیں ۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 26: خلیفہ منتخب کرنے کا حق

دفعہ نمبر 27: بیعت سے خلافت کا انعقاد

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 27: جن لوگوں کی بیعت سے خلافت کا انعقاد ہوتاہے اگر وہ لوگ بطورِ خلیفہ کسی ایک شخص کی بیعت کرلیں تو باقی لوگوں کی طرف سے دی جانے والی بیعت، بیعتِ اطاعت ہوگی اور یہ بیعتِ انعقاد نہیں ہوگی۔  چنانچہ جس شخص کے اندر سرکشی کے امکانات نظر آئیں اور وہ مسلمانوں کی وحدت کو توڑنے کی کوشش کرے ،تو اسے بیعت پر مجبور کیا جائے گا

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 27: بیعت سے خلافت کا انعقاد

دفعہ نمبر 28:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 28: صرف وہی شخص خلیفہ بن سکتا ہے جسے مسلما ن منتخب کریں ۔ کسی بھی شخص کو خلیفہ کے اختیارات اس وقت حاصل ہوں گے جب دوسرے شرعی عقود کی طرح اس کی بیعت کا عقد شرعی طور پر مکمل ہو جائے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 28:

دفعہ نمبر 29:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 29: وہ ملک یا خطہ جو خلیفہ کے ہاتھ پر بیعت انعقاد کرے، کے لیے شرط ہے کہ اس ملک کا اقتدار اس کا اپنا ہو، جس کا انحصار صرف مسلمانوں پر ہو اور کسی کافر ریاست کا اقتدار میں کوئی عمل دخل نہ ہو اور اس ملک کی داخلی وخارجی امان اور مسلمانوں کی امن و سلامتی اسلام کی وجہ سے ہو نہ کہ کفار کے بل بوتے پر۔ جو علاقے صرف خلیفہ کی اطاعت کی بیعت کریں ان کے لیے یہ شرط لازم نہیں۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 29:

دفعہ نمبر 30:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 30: خلیفہ کے طور پر جس شخص کی بیعت کی جارہی ہو اس کے اندرا نعقاد خلافت کی تمام شرائط کا ہونا لازمی ہے اگر چہ اس کے اندر افضلیت کے شرائط نہ ہوں کیونکہ اعتبار شروط انعقاد کا ہے ۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 30:

دفعہ نمبر 31:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 31: خلیفہ کے لیے سات شرائط ،کہ جن کے پائے جانے سے ہی اس کی خلافت کا انعقاد ہوتا ہے، مندرجہ ذیل ہیں : مرد ہونا، مسلمان ہونا ، بالغ ہونا ، عا قل ہونا ، آزاد ہونا ، عا دل ہونا اور خلافت کی ذمہ داری سے عہدہ برآء ہونے کے قابل ہونا۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 31:

دفعہ نمبر 32:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 32: خلافت کا منصب خلیفہ کی موت، سبکدوشی یا اس کو معزول کیے جانے سے خالی ہو جائے تو تین دن (بشمول انکی راتوں کے) کے اندر اندردوسرا خلیفہ مقرر کرنا فرض ہے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 32:

دفعہ نمبر 33:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 33: (نئے خلیفہ کے تقرر کے سلسلے میں) ایک عبوری (وقتی ) امیر مقرر کیا جائے گا جو مسلمانوں کے امور کی دیکھ بھال کرے اورمنصب خلافت کے خالی ہونے کے بعدنئے خلیفہ کے تقرر کے عمل کا آغاز کرے، جو یہ ہو گا:

  • ا) سابق خلیفہ جب یہ محسوس کرے کہ اس کی موت قریب ہے یا وہ سبکدوش ہونے کا ارادہ کرے تو اس کو یہ اختیار حاصل ہے کہ ایک عبوری امیر مقرر کرے۔
  • ب) اگر عبوری امیر کے تقرر سے قبل خلیفہ کا انتقال ہو جائے یا وہ مستعفی ہو جائے یا خلیفہ کے انتقال یا استعفیٰ کے علاوہ کسی اور وجہ سے منصب خلافت خالی ہو جائے تو وہ معاون جو معاونین میں سب سے عمر رسیدہ ہو گا وہ عبوری امیر ہو گا سوائے اس کے کہ وہ معاون بذاتِ خود خلافت کا امیدوار ہو ۔ ایسی صورت میں وہ معاون عبوری امیر ہو گا جو عمر میں اس سے کم ہو ،علیٰ ھذالقیاس۔
  • ج) اگر تما م معاونین خلافت کے امیدوار ہوں تب وزراء تنفیذ میں سے سب سے عمر رسیدہ وزیر (معاون) عبوری امیر ہو گا اگر وہ بھی خلافت کا امیدوار ہوتو اس کے بعد والا، علیٰ ھذا لقیاس۔
  • د) اگر تمام تر وزراء ِ تنفیذ خلافت کے امیدوار ہوں تو وزرائِ تنفیذ میں سے سب سے کم عمر وزیر عبوری امیر ہو گا۔
  • ھ) عبوری امیر کو احکام کی تبنی کا اختیار نہیں ہو گا۔
  • و) عبوری امیر تین دن کے اندراندر نئے خلیفہ کے تقرر کے لیے ہر ممکن اقدامات کرے گا اور اس مدت میں توسیع کی اجازت نہیں سوائے اس کہ محکمہ المظا لم کسی شدید سبب کی بناء پر اس مدت میں توسیع کردے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 33:

دفعہ نمبر 34:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 34: خلیفہ کے تقرر کا طریقہ بیعت ہے خلیفہ کے تقرر اور اس کو بیعت دینے کے عملی اقدامات کچھ اس طرح ہوںگے:

  • ا۔ محکمۃ المظالم خلافت کے منصب کے خالی ہونے کا اعلان کرے گا۔
  • ب۔ عبوری امیر اپنی ذمہ داری سنبھالے گا اور فوراََ نامزدگیاں شروع ہونے کا اعلان کرے گا۔
  • ج۔ شروط انعقاد کو پورا کرنے والے امیدوار وں کی نامزدگیاں قبول کی جا ئیں گی اورمحکمۃ المظالم کے مطابق ان شرائط پر پور نہ ا اترنے والوں کی نامزدگی مسترد کر دی جائے گی۔
  • د۔ وہ امیدوار جن کی نامزدگی کو محکمۃ المظالم نے قبول کیا ہو مجلس امت کے مسلمان اراکین دو مرتبہ مختصر کریں گے: پہلے اختصار میںوہ ووٹ کی اکثر یت کی بنیاد پر چھ امیدواروں کو منتخب کریں گے اوردوسرے مر حلے میں ووٹ کی اکثریت کی بنیاد پر ان میں سے دو کا انتخاب کریں گے۔
  • ھ۔ ان دو امیدواروں کا اعلان کیا جا ئے گا اور مسلمانوں کو ان میں سے ایک کو منتخب کرنے کا کہا جا ئے گا ۔
  • و۔ انتخابی نتائج کا اعلان کیا جائے گا اور مسلمانوں کو آگاہ کیا جائے گا کہ کس نے زیادہ ووٹ لیے۔
  • ز۔ جس شخص نے زیادہ ووٹ لئے ہو ں مسلمان کتاب وسنت پر عمل کرنے کی شرط پر اس کی خلافت کی بیعت کریں گے۔
  • ح۔ بیعت کے مکمل ہونے کے بعد لوگوں کے سامنے یہ اعلان کیا جائے گا کہ کون مسلمانوں کا خلیفہ بن گیا تا کہ تمام مسلمانوں کو خلیفہ کے تقرر کا علم ہو ، اس کے نام کے اعلان کے ساتھ اس کی صفات کا بھی اعلان کیا جائے گا جن کی بنیادپروہ انعقاد کی شرائط پر پورا اترا ۔

 

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 34:

دفعہ نمبر 35:

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 35: امت ہی خلیفہ کا تقرر کرتی ہے ۔لیکن جس وقت شرعی طریقے سے خلیفہ کو بیعت انعقاد دے دی جائے اس کے بعد امت کو اُس خلیفہ کو معزول کرنے کا اختیار نہیں۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 35:

دفعہ نمبر 36: خلیفہ کی قوتیں

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 36: خلیفہ کے پاس درجہ ذیل اختیارات ہوتے ہیں :

  • ا) خلیفہ ہی ان احکامات کی تبنی کرتا ہے جو لوگوں کے امور کی دیکھ بھال کے لیے ضروری ہیں اور یہ تبنی کتاب و سُنت سے صحیح اجتہا د کے ذریعے مستنبط کردہ احکامات کی ہو تی ہے تا کہ یہ احکامات قوانین بن جائیں پھر ان پر عمل کرنا فرض ہو جاتا ہے اور ان کی مخالفت جائز نہیں۔
  • ب) خلیفہ ہی ریا ست کی داخلی اور خارجی پالیسی کے بارے میں جو اب دہ ہے، وہی فوج کا قا ئد اعلیٰ ہے اور اسی کو اعلانِ جنگ،صلح،جنگ بندی اور دوسرے معا ہدے کرنے کا اختیا ر ہے۔
  • ج) خلیفہ کو ہی غیر ملکی سفیروں کو قبول کرنے ،ان کومسترد کرنے ،مسلمان سفیروں کو تعینات کرنے اور ان کو معزول کرنے کا اختیار حاصل ہے ۔
  • د) وہی والیوں اور معاونین کو مقرریا معزول کر سکتا ہے یہ سارے لوگ جس طرح مجلس امت کے سامنے جوابدہ ہیںبالکل اسی طرح خلیفہ کے سامنے بھی جوابدہ ہیں ۔
  • ھ) خلیفہ ہی قاضی القضاۃ اور دوسرے قاضیوں کو مقرر اور بر طرف کر سکتا ہے اس میں صرف یہ استثنا ء ہے کہ خلیفہ صرف اس حالت میں قاضی المظالم کو بر طرف نہیں کر سکتا جب قاضی المظالم کسی معا ملے میں خلیفہ یا اس کے معاونین یا اس کے قاضی القضاہ کے خلاف کسی شکایت کا جائزہ لے رہا ہو۔ خلیفہ ہی تمام ڈائریکڑز ، فوجی کمانڈروں اور جنرلوں کو مقرر یا بر طرف کر سکتا ہے اور یہ سارے لو گ صرف خلیفہ کے سامنے جوابدہ ہیں مجلس امت کے سامنے نہیں ۔
  • و) خلیفہ ہی ان احکام شر عیہ کی تبنی کرتا ہے جن کی رو سے ریاست کا بجٹ تیا ر کیا جاتا ہے وہی بجٹ کے حصوں اور ہر شعبے کے لیے رقم مختص کرتا ہے خواہ اس کا تعلق آمدن سے ہو یا اخراجات سے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 36: خلیفہ کی قوتیں

دفعہ نمبر 37

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 37: خلیفہ تبنی میں احکا م شر عیہ کا پا بند ہے چنا نچہ اس کیلئے کسی ایسے حکم کی تبنی حر ام ہے جس کا اس نے ’ادلہ شریعہ‘ سے صحیح طریقے سے استنباط نہ کیا ہو۔ وہ اپنے تبنی کردہ احکامات اور طریقہ استنباط کا بھی پابند ہے۔ چنانچہ اس کے لیے جائز نہیںکہ وہ کسی ایسے حکم کی تبنی کرے جس کے استنباط کا طریقہ اس سے متناقض ہو جسے خلیفہ تبنی کر چکا ہے، اور نہ ہی اس کے لیے جائز ہے کہ وہ کوئی ایسا حکم دے جو اس کے تبنی کردہ احکامات سے متناقض ہو۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 37

دفعہ نمبر 38

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 38: خلیفہ کو اپنی رائے اور اجتہا د کے مطا بق لو گو ں کے امو ار کی دیکھ بھا ل کا پو را حق حاصل ہے ۔ اس کو ان مبا حا ت میں بھی تبنی کا حق حا صل ہے جو ریا ستی امو ر کو چلا نے اور لوگو ں کی دیکھ بھا ل کیلئے ضر وری ہے ۔ تا ہم مصلحت کو دلیل بنا کر کسی حکم شر عی کی خلاف ورزی اس کے لیے بالکل جا ئز نہیں مثا ل کے طو ر پر غذائی قلت کو دلیل بنا کر وہ کسی ایک خاندان کو بھی کثرت اولا د سے منع نہیں کر سکتا، اسی طر ح مصلحت یا لو گو ں کے معا ملا ت کی دیکھ بھا ل کو بہا نہ بناکر کسی کا فر یا عو رت کو والی مقر ر نہیں کر سکتا یا اس کے علاوہ بھی کو ئی بھی خلاف شر ع کا م نہیں کر سکتا اور اس کیلئے کسی حا ل میں حر ام کو حلال کر نا یا حلا ل کو حر ا م کر نا جا ئز نہیں۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 38

دفعہ نمبر 39

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 39: خلیفہ کے لیے کوئی محدود مدت نہیں ،جب تک خلیفہ شریعت کی حفاظت اور اس کے احکامات کو نافذ کرتا ہے ، ریا ستی امور کی انجام دہی پر قادر ہے تب تک خلیفہ ہے اور اس وقت تک خلیفہ رہے گا جب تک اس کی حالت میں ایسی کوئی تبدیلی رونما ہو جائے جو اس کو خلافت کے منصب سے خارج کر دے ۔ جیسے ہی اس کی حالت بدل گئی تو فوراً اس کو بر طرف کرنا فرض ہو جاتا ہے۔

 

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 39

دفعہ نمبر 40

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 40: وہ امور جن سے خلیفہ کی حالت بدل جاتی ہے اوروہ خلیفہ کے منصب سے خارج ہو جاتا ہے وہ تین ہیں۔

  • ا) انعقاد خلافت کی شرائط میں سے کسی شرط میں خلل (نقص) آجائے ،جیسا کہ وہ مر تد ہو جائے، کھلم کھلا فسق پر اتر آئے ، پاگل ہو جائے یا اسی قسم کی کوئی دوسری صورت پیش آئے۔کیونکہ یہ شرائط انعقاد کی شرائط بھی ہیں اور شرائطِ دوام (تسلسل کی شرائط) بھی ہیں۔
  • ب) کسی بھی سبب سے وہ خلافت کی ذمہ داری سے عاجز ہو جائے۔
  • ج) وہ اس قدر مغلوب ہو جائے یا دبائو میں آجائے کہ اپنی رائے سے شریعت کے موافق مسلمانوں کے مفادات کے لیے اقدامات نہ کر سکے، چنانچہ جب کوئی اس پر اس حد تک غالب آجائے کہ وہ احکام شرعیہ کے مطابق رعایا کے مفادات کی نگرانی بذاتِ خود اپنے اختیار و ارادے اور اپنی رائے کے مطابق کرنے سے عاجز ہو جائے تو اسے حکماً فرائض خلافت کی ادائیگی سے عاجز سمجھا جائے گا۔ ایسی صورت میں وہ اس منصب کا اہل نہیں رہے گا ۔یہ دو صورتوں میں ممکن ہے:

پہلی حالت : اس کے حاشیہ برداروں میں سے کوئی فردیا افراد اس پر اس طرح مسلط ہو جائیںکے اس پر اپنی رائے ٹھونس دیںاور وہ امور کی انجام دہی میں ان کے سامنے مجبور ہو جائے ۔ اگر ان کے تسلط سے چھٹکارا اس کے لئے ممکن ہو تو اس تو تنبیہ کی جائے گی اور ایک معینہ مدت تک اس کو مہلت دی جائے گی پھر بھی اگر وہ ان کے غلبہ سے باہر نہیںنکلتا تو اس کو برطرف کیا جائے گا ۔ اگر چھٹکارے کی کوئی امید نہ ہو تو فورا اس کو برطرف کردیا جائے گا۔

دوسری حالت: وہ کسی ایسے زبردست دشمن کے ہاتھوں گرفتارہو جائے۔یہ گرفتاری بالفعل ہو یا وہ دشمن خلیفہ پر تسلط حاصل کر لے ۔اس حال میںبھی دیکھا جائے گا کہ اگر اسے چھٹکارا پانے کی امید ہو تو اس وقت تک اس کو مہلت دی جائے گی ورنہ اسے معزول کر دیا جائے گا۔ اور اگر شروع ہی سے امید نہ ہو تو اسی وقت اس کو برطرف کر دیا جائے گا۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 40

دفعہ نمبر 41

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 41: صرف محکمتہ المظالم ہی یہ فیصلہ کر سکتا ہے کہ آیا خلیفہ کی حالت اس قدر بگڑ چکی ہے کہ جس کی وجہ سے وہ خلافت سے خارج ہے یا نہیں۔ صرف محکمتہ المظالم کے پاس خلیفہ کو تنبیہ کرنے یا اس کو برطرف کرنے کا اختیار ہے۔

مزید پڑھیے: دفعہ نمبر 41

مقبول مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر133:…

دفعہ نمبر133: عشری زمین وہ ہے جہاں کے رہنے والے اس زمین پر رہتے ہوئے (بغیر کسی جنگ سے یا صلح کے ) ایمان لے آئے ،اسی طرح جزیرۃ العرب کی زمین ۔ جبکہ خراجی زمین وہ زمین ہے جو جنگ یا صلح کے ذریعے فتح کی گئی ہو ،سوائے جزیرۃ العرب کے۔ عشری زمین اور اس کے پیداوار کے مالک افراد ہوتے ہیں، جبکہ خراجی زمین ریاست کی ملکیت ہوتی ہے اور اس کی پیداوار افراد کی ملکیت ہوتی ہے، ہر فرد کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ شرعی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 1:…

دفعہ نمبر 1: اسلامی عقیدہ ہی ریا ست کی بنیا د ہے یعنی ریا ست کے وجود ، اس کی سا خت (ڈھانچہ)، اس کے محا سبے اور اس سے متعلق کسی بھی چیز کی بنیا د اسلامی عقیدہ ہی ہو گا۔ ساتھ ہی یہ عقیدہ دستور اور قوانین کے لیے ایسی اسا س ہو گا کہ ان دو نوں سے متعلق کسی بھی چیز کی اُس وقت تک اجازت نہیں ہو گی جب تک وہ اسلامی عقیدہ سے اخذ شدہ نہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 168:…

دفعہ نمبر 168: اسلامی ریاست اور دوسری ریاستوں کی کرنسیوں کے مابین تبادلہ جائز ہے جیسا کہ اپنی کرنسی کا آپس میں تبادلہ جائز ہے، اگر کرنسی دو مختلف جنس کی ہوں تو کمی بیشی کے ساتھ بھی تبادلہ جائز ہے بشر طیکہ یہ تبادلہ دست بدست ہو۔ ادھار کی بنیاد پر یہ تبادلہ جائز نہیں۔ جب دونوں کرنسیاں مختلف جنس کی ہوں تو بغیر کسی قید کے شرح تبادلہ میں کمی بیشی جائز ہے۔ ریاست کے ہر شہری کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ کوئی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 14:…

دفعہ نمبر 14: افعا ل میں اصل حکم ِ شرعی کی پا بند ی ہے ، اس لیے حکم شرعی معلو م کر کے ہی کو ئی کام کیا جائے گا ، جبکہ اشیا ء میں اصل ابا حہ (مبا ح ہو نا ) ہے جب تک کسی شے کے حرا م ہونے کی دلیل وار دنہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 7:…

دفعہ نمبر 7: ریاست ان تمام افراد پر جو اسلامی ریاست کے شہری ہوں مسلم ہوں یا غیر مسلم حسب ذیل طریقے سے اسلامی شریعت نافذکرے گی : (ا) مسلمانوں پر بغیر کسی استثناء کے تما م اسلامی احکامات نافذکرے گی۔ (ب) غیر مسلموں کو ایک عام نظام کے تحت ان کے عقیدے اور عبادت کی آزادی دی جائے گی۔ (ج) مرتدین اگر خود مرتد ہوئے ہیں ان پر مرتد کے احکامات نافذ کیے جائیں گے ،اگر وہ مرتد کی اولاد ہوں اور پیدائشی غیرمسلم…

دستور کے کچھ مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 154:…

دفعہ نمبر 154: حقوق اور فرائض کے لحاظ سے افراد اور کمپنیوں کے ملازمین ریاستی ملازمین کی طرح ہیں۔ ہر وہ شخص ملازم ہے جو اجرت پر کام کرتا ہے خواہ کام یا کام کرنے والا کوئی بھی ہو۔ جب آجر (ملازم) اور مستاجر (کام کروانے والا) کے درمیان اجرت پر اختلاف ہو جائے تو اجرت مثل کے مطابق فیصلہ کیا جائیگا۔ اجر ت کے علاوہ اگر کسی چیز میں اختلاف ہو جائے تواس کا فیصلہ احکام شرعیہ کے مطابق ملازمت کے معاہدے کو…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 92:…

دفعہ نمبر 92: مظالم کے قضائ(فیصلے) کے لیے مجلس قضاء کی شرط نہیں،نہ ہی مدع علیہ کو بلانا اور نہ ہی مدعی کی موجودگی شرط ہے بلکہ محکمہ مظالم کو کسی بھی ظلم کو دیکھنے کا حق ہے چاہے کوئی دعوی کرے یا نہ کرے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 20:…

دفعہ نمبر 20: مسلمانوں کی جا نب سے حکا م کا محا سبہ مسلما ن کا حق بھی ہے اور ان پر فرض کفا یہ بھی۔ ریاست کے غیر مسلم شہر یوں کو بھی حکمران کے ظلم کی شکا یت کے اظہا ر کا حق حا صل ہے ۔ وہ اسلامی احکاما ت کو ان پر غلط اندا ز سے نا فذ کرنے کی شکا یت بھی کر سکتے ہیں۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 54:…

دفعہ نمبر 54: والی کوخلیفہ کے نائب ہونے کی وجہ سے اپنے ولایہ میںحکمرانی اور ولایہ کے محکموں کی نگرانی کااختیا ر حاصل ہے ۔اس کواپنے ولایہ میں محکمہ مالیات ،قضاء ( عدلیہ) اور فوج کوچھوڑکر باقی تمام محکموں کے بارے میں تمام اختیارات حاصل ہوتے ہیں ۔ وہ اہل ولایہ کاامیر ہے اور ولایہ سے متعلق تمام امور کا نگران ہے تاہم پولیس بحیثیت ادارہ اس کے ماتحت نہیں ہوگی لیکن احکامات کی تنفیذ کے لیے اس کے ماتحت ہے ۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 123:…

دفعہ نمبر 123: اقتصادی پالیسی یہ ہے کہ (ریاست کے شہر یوں کی) ضروریات کو پورا کرتے وقت معاشرے کی بنیاد(حکم شرعی)کو مدنظر رکھا جائے گا یعنی ضروریات کو پورا کرنے کی اساس حکم شرعی ہو گی۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 70:…

دفعہ نمبر 70: داخلی امن کا محکمہ ہی امن وامان کے انتظاما ت کا ذمہ دار ہوتاہے اور ہر قسم کے داخلی خطرات سے نمٹتاہے اور پولیس کے ذریعے ریا ست کے امن وامان کو برقرار رکھتاہے۔ یہ محکمہ فوج سے مداخلت کی درخواست صرف خلیفہ کے حکم کے بعد ہی کرسکتاہے۔ اس محکمے کا سر براہ ڈائریکٹر برائے داخلی امن وسلامتی کہلاتا ہے۔ ہر صوبے میں اس محکمے کی شاخیں ہوتی ہیں جوکہ داخلی امن کے ادارے ہوتے ہیں اور ہر صوبے کے ادارے…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 44:…

دفعہ نمبر 44: معاون تفویض کو اختیارات سونپنے کی یہ شرط ہے کہ اختیارات دیتے وقت دوباتوں کو مدِنظر رکھنا چاہیے ، پہلی بات یہ کہ اختیارات عمومی ہونے چاہیے ، دوسری با ت یہ کہ وہ خلیفہ کا نائب بنا دیا جائے یا اس سے ملتے جلتے اور کوئی الفاظ استعمال کرے جن سے یہ واضح ہوتا ہو کہ معاون کو ایک جگہ سے دوسری جگہ یا ایک ذمہ داری سے دوسری ذمہ داری کی طرف منتقل کیا جا سکتا ہے اور اس کا م کے لیے نئے سرے سے اختیا…