https://www.facebook.com/khilafah.net

nusr-khilafah-ur-8-70-575

خارجہ پالیسی (181-191)

دفعہ نمبر 187: امت کے سیاسی مسئلہ کے ستون

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور, دفعہ نمبر 187: امت کا سیاسی مسئلہ یہ ہے کہ اسلام اس امت کی ریاست کی قوت ہے، اور یہ کہ اسلامی احکامات کابہترین طریقے سے نفاذ کیا جائے اور دنیا کے سامنے اسلامی دعوت کو پیہم طریقے سے پہنچایا جائے۔

 

 

Article 187: The political cause of the Ummah is Islam, in the strength of the status of the State, the best implementation of its rules and continuity in carrying its call to mankind.

 

The meaning of the words the political cause is the matter that the State and the Ummah face and is a duty upon them to undertake whatever it necessitates from the governing of affairs. This issue could be general, and so it would be the political cause, or it could be specific in which case it would be a political cause, or it could be a part of a matter, and so in which case it would then be an issue from the various issues of the cause. For example, the issue that faces the Islamic Ummah and obliges her to undertake whatever it requires of the running of the affairs is the re-establishment of the Khilafah, so this would be the political cause, and anything else from the various causes such as the case of Palestine and the case of the Caucasus countries are issues of this cause, and though they are issues which the Islamic Ummah faces and they are affairs that need to be taken care of, however they are part of the return of the Khilafah. When the Islamic State is established, its political cause would be to implement Islam domestically and carry the call to Islam internationally, so if it becomes stabilised in a place then its political cause would be the one mentioned in this article. Subsequently if it implemented Islam correctly and its international profile was strengthened, then its political cause would become carrying the call to Islam to the world, until Allah (swt) made Islam dominant over all other ways of life.

Therefore, the political cause is what the State and Ummah face from the important political issues that the Shari’ah obligated upon them. So the State is obligated to work to establish it in accordance with what the Shari’ah required of it to do, and this does not require an evidence because it is part of the implementation of the rules of the Shari’ah upon the issues as they occur.

For this reason, the political cause changes as the issues that occur change. The political cause for the Messenger صلى الله عليه وآله وسلمwhile he was in Makkah in the stage of the call was to make Islam manifest, which is why when Abu Talib said to him: “Your people have come to me and said such and such, whatever they had said to him, so spare me and yourself, and do not make me carry what I cannot bear”, the Messenger صلى الله عليه وآله وسلمthought that his uncle would forsake him and give him up, and his support for him was weakened, so he said to him:

«يَا عَمُّ، وَاللهِ لَوْ وَضَعُوا الشَّمْسَ فِي يَمِينِي وَالْقَمَرَ فِي يَسَارِي عَلَى أَنْ أَتْرُكَ هَذَا الأَمْرَ حَتَّى يُظْهِرَهُ اللهُ أَوْ أَهْلَكَ دُونَهُ مَا تَرَكْتُهُ»

O Uncle, by Allah, if they place the sun in my right hand and the moon in my left hand in return for giving up this matter, I will never desist until either Allah makes it prevail or I perish defending it" (Sirah of Ibn Hisham). These words indicate that the political cause for the Messenger صلى الله عليه وآله وسلمat that time was making Islam manifest. When he صلى الله عليه وآله وسلمwas in Madinah, the State had been established and a number of battles occurred between him صلى الله عليه وآله وسلمand the main enemy, the head of disbelief which at that time was the Quraysh, the political cause of him صلى الله عليه وآله وسلمremained the manifestation of Islam. This is why on his صلى الله عليه وآله وسلمway to pilgrimage before reaching Hudaybiyah, after he heard that the Quraysh came to know that he was on the way and had come out in order to fight him, a man from Bani Ka’ab said to him: “They heard about your journey, and so they left wearing tiger skins, and they camped in Thi-Tuwa making oaths to Allah that you would never enter”, and so the Messengerصلى الله عليه وآله وسلمsaid:

«يَا وَيْحَ قُرَيْشٍ! لَقَدْ أَكَلَتْهُمْ الْحَرْبُ، مَاذَا عَلَيْهِمْ لَوْ خَلَّوْا بَيْنِي وَبَيْنَ سَائِرِ النَّاسِ» إلى أن قال: «فَمَاذَا تَظُنُّ قُرَيْشٌ؟ وَاللَّهِ، إِنِّي لا أَزَالُ أُجَاهِدُهُمْ عَلَى الَّذِي بَعَثَنِي اللَّهُ لَهُ حَتَّى يُظْهِرَهُ اللَّهُ لَهُ أَوْ تَنْفَرِدَ هَذِهِ السَّالِفَةُ»

Woe upon Quraysh! War has destroyed them. What would it matter to them if they left me to deal with the rest of the Arabs” until his صلى الله عليه وآله وسلمwords: “What does Quraysh think? By Allah, I will continue to fight them with what Allah sent me until Allah makes it prevail or until I die (Salifah is separate)” (reported by Ahmad from Al-Maswar and Marwan). The Salifah is the surface of the neck, and the Messenger صلى الله عليه وآله وسلمused its separation as a metaphor for death; in other words: “until death”.

So the political cause in both situations was the same. However, in the first situation he صلى الله عليه وآله وسلمmade clear his صلى الله عليه وآله وسلمinsistence to continue conveying the call to Islam until Allah (swt) made it manifest, and in the second situation, in other words, at the time the State was established, he صلى الله عليه وآله وسلمmade clear his صلى الله عليه وآله وسلمinsistence upon Jihad until Allah (swt) made Islam manifest.

After the Prophet صلى الله عليه وآله وسلمarrived at an armistice treaty with the Quraysh, which was the great opening, since it was the preparation for the conquest of Makkah and made the Arabs come to the Messenger of Allah صلى الله عليه وآله وسلمembracing the religion of Islam in droves, at which point the political cause for the Messenger صلى الله عليه وآله وسلمwas not simply making Islam manifest but rather it became making it manifest and dominant over all other ways of life through battles against the states following other ways of life, such as the Romans and Persians. This is the reason why the Surah of Al-Fateh was revealed to him صلى الله عليه وآله وسلم, including the words of Allah (swt):

((هُوَ الَّذِي أَرْسَلَ رَسُولَهُ بِالْهُدَى وَدِينِ الْحَقِّ لِيُظْهِرَهُ عَلَى الدِّينِ كُلِّهِ))

It is He who sent His Messenger with guidance and the religion of truth to manifest it over all religion.” (TMQ 48:28). So accordingly, if the Islamic State implemented Islam well, and its international profile was strong, the political cause for it would become making Islam dominant over all other religions and preparation for defeating those who carry other ideologies and other religions.

This is what the article is based upon.

مقبول مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر133:…

دفعہ نمبر133: عشری زمین وہ ہے جہاں کے رہنے والے اس زمین پر رہتے ہوئے (بغیر کسی جنگ سے یا صلح کے ) ایمان لے آئے ،اسی طرح جزیرۃ العرب کی زمین ۔ جبکہ خراجی زمین وہ زمین ہے جو جنگ یا صلح کے ذریعے فتح کی گئی ہو ،سوائے جزیرۃ العرب کے۔ عشری زمین اور اس کے پیداوار کے مالک افراد ہوتے ہیں، جبکہ خراجی زمین ریاست کی ملکیت ہوتی ہے اور اس کی پیداوار افراد کی ملکیت ہوتی ہے، ہر فرد کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ شرعی…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 1:…

دفعہ نمبر 1: اسلامی عقیدہ ہی ریا ست کی بنیا د ہے یعنی ریا ست کے وجود ، اس کی سا خت (ڈھانچہ)، اس کے محا سبے اور اس سے متعلق کسی بھی چیز کی بنیا د اسلامی عقیدہ ہی ہو گا۔ ساتھ ہی یہ عقیدہ دستور اور قوانین کے لیے ایسی اسا س ہو گا کہ ان دو نوں سے متعلق کسی بھی چیز کی اُس وقت تک اجازت نہیں ہو گی جب تک وہ اسلامی عقیدہ سے اخذ شدہ نہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 107:…

دفعہ نمبر 107: ریاست کے ہر اس شہری کو جو بالغ اور عاقل ہو ، مرد ہو یا عورت، مسلم ہو یا غیر مسلم، مجلس امت اور مجلس ولایہ کا رکن بننے کاحق حاصل ہے،مگرغیر مسلم کی رکنیت حکمرانوں کے ظلم یااسلام کو برے طریقے سے نافذ کر نے کی شکایت کے اظہار تک محدودہو گی۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر134:…

دفعہ نمبر134: آباد کاری اور حد بندی (پتھر وغیرہ رکھ کر)بنجر زمین کا مالک بنا جا سکتا ہے۔ جبکہ آباد زمین کا مالک کسی شرعی سبب سے بنا جا سکتا ہے جیسے میراث، خریداری یا ریاست کی جانب سے عطا کرنے سے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 168:…

دفعہ نمبر 168: اسلامی ریاست اور دوسری ریاستوں کی کرنسیوں کے مابین تبادلہ جائز ہے جیسا کہ اپنی کرنسی کا آپس میں تبادلہ جائز ہے، اگر کرنسی دو مختلف جنس کی ہوں تو کمی بیشی کے ساتھ بھی تبادلہ جائز ہے بشر طیکہ یہ تبادلہ دست بدست ہو۔ ادھار کی بنیاد پر یہ تبادلہ جائز نہیں۔ جب دونوں کرنسیاں مختلف جنس کی ہوں تو بغیر کسی قید کے شرح تبادلہ میں کمی بیشی جائز ہے۔ ریاست کے ہر شہری کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ کوئی…

دستور کے کچھ مضامین

خلافت ریاست کے دستور

خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر146:…

دفعہ نمبر146: مسلمانوں سے وہ ٹیکس وصول کیا جائے گا جس کی شرع نے اجازت دی ہے اور جتنا بیت المال کے اخراجات کو پورا کرنے کے لیے کافی ہو۔ شرط یہ ہے کہ یہ ٹیکس اس مال پر وصول کیا جائے گا جو صاحبِ مال کے پاس معروف طریقے سے اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے بعد زائد ہواور یہ ٹیکس ریاست کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے کافی بھی ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 41

دفعہ نمبر 41: صرف محکمتہ المظالم ہی یہ فیصلہ کر سکتا ہے کہ آیا خلیفہ کی حالت اس قدر بگڑ چکی ہے کہ جس کی وجہ سے وہ خلافت سے خارج ہے یا نہیں۔ صرف محکمتہ المظالم کے پاس خلیفہ کو تنبیہ کرنے یا اس کو برطرف کرنے کا اختیار ہے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 19:…

دفعہ نمبر 19: حکمرانی یا حکمرانی میں داخل کو ئی بھی کا م کی ذمہ داری صرف اور صرف مر د، آزاد ، با لغ، عاقل ،قا در اور با صلا حیت شخص اٹھائے گا اور اس کا مسلما ن ہو نا بھی لا زمی شرط ہے۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 40

دفعہ نمبر 40: وہ امور جن سے خلیفہ کی حالت بدل جاتی ہے اوروہ خلیفہ کے منصب سے خارج ہو جاتا ہے وہ تین ہیں۔ ا) انعقاد خلافت کی شرائط میں سے کسی شرط میں خلل (نقص) آجائے ،جیسا کہ وہ مر تد ہو جائے، کھلم کھلا فسق پر اتر آئے ، پاگل ہو جائے یا اسی قسم کی کوئی دوسری صورت پیش آئے۔کیونکہ یہ شرائط انعقاد کی شرائط بھی ہیں اور شرائطِ دوام (تسلسل کی شرائط) بھی ہیں۔ ب) کسی بھی سبب سے وہ خلافت کی ذمہ داری سے…
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 67:…

دفعہ نمبر 67: فوج کے لیے انتہا ئی اعلی سطح کی عسکری تعلیم کا بندوبست کر نا فر ض ہے اور جہاں تک ممکن ہو فوج کو فکر ی لحاظ سے بھی بلند رکھا جا ئے گا۔ فوج کے ہر ہر فرد کو اسلامی ثقا فت سے مزین کیا جائے گا تاکہ وہ اسلام کے با رے میں مکمل بیدار اور باشعور ہو اگرچہ اس کی سطح عام ہی کیوں نہ ہو۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 138…

دفعہ نمبر 138 : کار خانہ بحیثیت کارخانہ فرد کی ملکیت ہے ،تاہم کارخانے کا وہی حکم ہے جو اس میں بننے والے مواد(پیداوار) کا ہے۔ اگر یہ مواد فردکی املاک میںسے ہو تو کارخانہ بھی انفرادی ملکیت میں داخل ہو گا۔ جیسے کپڑے کے کارخانے (گارمنٹس فیکٹری) اوراگر کارخانے میںتیار ہونے والا مواد عوامی ملکیت کی اشیاء میں سے ہوگا تو کارخانہ بھی عوامی ملکیت سمجھا جائے گا جیسے لوہے کے کارخانے(Steel Mill) ۔
خلافت ریاست, نبوی طریقہ کار وسلم خلافت, خلافت ریاست کے دستور,

دفعہ نمبر 76:…

دفعہ نمبر 76: خلیفہ ایسے شخص کو قاضی القضاۃ مقرر کرے گا جو مرد ، با لغ، آزاد ، مسلمان ، عاقل، عادل اور فقیہ ہو ۔ پھر اگر اس کو قاضی المظالم مقرر کرنے اور اس کو بر طرف کرنے اور مظالم میں فیصلے کرنے کا اختیار بھی دیا جائے تب اس کے لیے مجتہد ہونا ضروری ہے ۔اور انتظامی قوانین کے اندر رہتے ہوئے اس کے پاس قاضیوں کے تقرر، ان کو سمجھانے اور ان کو بوقت ضرورت برطرف کرنے کا اختیار بھی حاصل ہو گا۔تا ہم…